نمازیں کتنی پڑھ لی کتنے روزے ساتھ لایا ھے

یہ محشر ھے یہاں چلنے کو کچھ اسباب لایا ھے

نھی ھےوقت گنتا میں پڑھوں تیرے عمل کو کیوں

کوئی ھے ساتھ تیرے تو کسی کو ساتھ لایا ھے

یہاں ہر ساعت کوئی نہ کوئی منزل بدلتی ھے

بدلتے ان لمحوں کے تو عوض احساس لایا ھے

بتا مجھ کو نہ کتنے فرض تو انجام کر گزرا

وکیل اپنا کوئی تو اس جہاں میں ساتھ لایا ھے

فقط سجدے وضو صومُ و رکوع وزنی نہ مالُ زر

بتا حبِ علی مدھے محمد ساتھ لایا ھے
ڈاکٹررضا