ہے کیفیت میں چھپے کس طرح خدا جانے
یہ تم سے پھر ھو ملاقات کب خدا جانے
کٹھن سفر تھا یہ اگلا سفر خدا جانے
ھے کتنی دیر، تیری آمد لئے خدا جانے
تھا انتظار رھا، اب بھی انتظار ہے سچ
تو کر یقین، کہ یہ اعتبار خدا جانے
( ڈاکٹررضا)